، بالگتر، معروف منشیات فروش و نیشنل پارٹی کے رہنماامام بیل کا دست راست جھڑپ میں ہلاک، بی ایل ایف نے ذمہ داری قبول کرلی

اتوار 21 ستمبر, 2014

ہمگام نیوز۔۔ ۔۔تازہ ترین اطلاع کے مطابق بالگتر میں ریاستی ایجنٹ میر یقوب بالگتری اپنے کئی ساتھیوں سمیت مسلح افراد کے ساتھ جھڑپ مین ہلاک ہوگئے  ہلاک، یقوب بالگتری اوراسکےگروہ  کے متعلق کہا جاتا ہے کہ وہ مشہورمنشیات فروش،آئی ایس آئی،فوج کے اہم کارندہ اورمکران میں ڈیتھ اسکواڈ کے  سرغنہ   امام بھیل کا دست راست تھے۔۔۔۔دریں اثناء بلوچستان لبریشن فرنٹ کے ترجمان گہرام بلوچ نے ریاستی فورسز اور سرکاری مخبروں کی ہلاکت و حملوں کی ذمہ داری قبول کرتے ہوئے نامعلوم مقام سے سیٹلائٹ فون کے ذریعے کہا کہ کیچ کے علاقے بالگتر میں ہمارے سرمچاروں نے آج پاکستانی ریاستی مخبر،آئی ایس آئی کے ایجنٹ اور ڈکیتی و اغواء برائے تاوان میں ملوث میر یعقوب بالگتری کے قافلے پر حملہ کرکے میریعقوب بالگتری ، مُلّا فاضل اور زمان بروت کو گیارہ ساتھیوں سمیت ہلاک کیا، نو کلاشنکوف ، تین پسٹل اور تین سٹیلائٹ فون بھی قبضے میں لے لئے ۔یہ گروہ ایک عرصے سے بلوچ جہدکاروں کی مخبری ، ڈرگ ٹریفکنگ اور اغواء برائے تاوان جیسے سنگین جرائم میں ملوث تھا،بلیدہ بالگتر و ہوشاب روڈ پر چوری ،ڈکیتی کی تمام وارداتوں میں اسی گروہ کے کارندے شامل ہیں ۔ کئی دفعہ تنبیہہ کے باوجود یہ اپنے کرتوتوں سے باز نہیں آئے ۔ ان میں شامل مُلّا فاضل 2010 سے 2012تک بی ایل ایف سے منسلک تھا، بعد میں پارٹی سے بغاوت کرکے میر یعقوب کے ریاستی گینگ میں شامل ہوگیاجو پارٹی کارکنوں کی کی مخبری ، گزشتہ سالوں بالگتر میں بلوچوں کو شہید کروانے اور اسی سال مئی میں بالگتر مزار ھلک آپریشن میں براہ راست ملوث تھے ، اس نیٹ ورک کے کئی اور کارندے بھی ہمارے نشانے پر ہیں ،آج صبح آواران پیراندر کنیرو میں ہمارے سرمچاروں نے سیکورٹی فورسز کی 50 اہلکاروں کی پیدل گشت اور ایک لینڈ کروز کو نشانہ بنایا،تیس منٹ تک شدید حملہ کے بعد سیکورٹی فورسز کی درجن سے زائد اہلکار ہلاک اور متعدد زخمی ہوئے جبکہ لینڈ کروز کو راکٹ سے نشانہ بنا کر تباہ کیا۔ ہفتہ کے روزتمپ کے علاقے آزیان اور رودبن کے درمیان سرمچاروں نے آرمی کے قافلے پر حملہ کر کے فورسز کو بھاری جانی و مالی نقصان پہنچایا۔سرزمین کی آزادی تک قابض ریاستی فورسز پر حملے جاری رہیں گے

image_pdfimage_print

[whatsapp] خبریں. RSS 2.0