میری حوالگی کا مطالبہ چین کو خوش کرنا ہے ۔ نواب براہمدغ بگٹی

جمعرات 7 مئی, 2015

سویزلینڈ(ہمگام نیوز) بلوچ جلاوطن رہنما اور قائد بلوچ ریپبکن پارٹی نے سوئٹزرلینڈ کےایک  اخبار کو دیئے گئے انٹرویوں میں کہا ہماری پارٹی کا نعرہ و منشور بہت واضح ہے ایک آزاد اور خود مختار بلوچ ریاست۔ انہوں نے پاکستان کے سوئز حکومت کو ان کی حوالگی کے بارے میں  تبصرہ  کرتے ہوئے کہا کہ یہ بات محض چین کو خوش کرنے کے لیے  کہی گئی ہے تاکہ پاک چین 46 بلین ڈالر معاہدہ  جو گوادر میں سرمایہ کاری کے لیے کیے گئےاورچین کو  تسلی ہو سکے۔ کیونکہ ماضی میں چینی انجنیئرز پر بلوچستان میں کئی حملے ہوچکے ہیں۔  ایک سوال کے جواب میں نے بہت واضح الفاظ میں کہا کہ پاکستان حولگی کا مطلب موت ہے جس طرح آئے دن ریاست پاکستان بلوچوں کے ساتھ کرتی آرہی ہے عقوبت خانوں میں تشدد اور پھر قتل۔
نواب براہمداغ بگٹی نے بین عالم اقوام کو متنبہ کیا کہ بلوچستان میں فوری مداخلت کرکے بلوچستان کو شام اور لیبیا ہونے سے بچائے ورنہ اس کے اثرات مغربی ممالک کو بھی اپنی لپیٹ میں لے سکتےہیں۔
اخبار کے مطابق سوئس حکومتی کے ایک ترجمان نے کہا کہ ایسا کوئی معاہدہ دونوں ممالک کے درمیان نہیں ہے مگر اس کے باوجود ان کے ملک کا قانون مطلوب اشخاص کی حوالگی کا معا ہدہ نہ ہونے کے باوجود تبادلہ کرسکتا ہے مگر اس کا یہ مطلب ہر گز نہیں کہ سوئس حکومت بگٹی کو پاکستان کے حوالے کرےگا سوئس قانون ایسے تبادلے کےدرخواستوں کو مستر کرسکتا ہے جس میں کسی کی سیاسی اظہار رائےکی وجہ سے ان کے زندگی کو خطرہ لاحق ہو۔

image_pdfimage_print

[whatsapp] خبریں. RSS 2.0